پرنس سیریز کی پہلی کہانی – ناگن

Share

اس لڑکی کی کہانی جسے پانا میری ضد تھی جسے پانا میر ی زندگی کا مقصد تھا
موبائل کی بیل نے مجھے اٹھنےپر مجبور کر دیا۔ راجو کے نام پر میں نےیہ بیل محفوظ کی ہوئی تھی ۔ نہیں تو میرے موبائل پر صرف ایک بیپ والی بیل لگی ہوئی تھی۔ جیسے ہی میں نے کال اوکے کی ۔ نیلی آنکھیں باس ۔ راجو نے بغیر تمہید کے مخصوص سگنل دیا ۔ وہ 125 پر ہیں اور بائیک چلانے وال کوئی بازی گر لگتا ہے میں اسے کھو بھی سکتا ہوں ۔ بائیک کا نمبر نوٹ کر لو، میں نے اسے ہدایت دی ۔ نمبر نہیں ہے باس ، اپلائیڈ فار ہے ، آپ آجاؤ ، میرے جسم میں جیسے بجلیاں دوڑ گئ ۔ میں پاجامے کے اوپر ہی ٹی شرٹ پہن کے والٹ ، چابیاں اور موبائل ، موبائل تو میرے کان سے لگا ہے۔ فلیٹ لاک کر کے چار منٹ کے اندر میں گاڑی اسٹارٹ کرچکا تھا۔ اس دوران راجو سے میں اس کی لوکیشن پوچھ چکا تھا ۔ تین سال پہلے میں نے راجو کو ایک مشن دیا تھا ۔ نیلی آنکھوں والی کو ڈھونڈنے کا ۔ تب سے اب تک یہ تلاش جاری تھی ۔ کچھ نیلی آنکھیں ملی پر اس میں وہ نہیں تھی جس کی مجھے تلاش تھی ۔ اس وقت میں بڑی اوور ڈرائیونگ کر رہا تھا ۔ صبح صبح بیشتر سڑکیں خالی تھیں ، راجو سے میرا مسلسل رابطہ تھا ۔ میں ان کی مخالف سمت سے آرہا تھا ۔ کیا خیال ہے راجو کہاں جا رہے ہیں وہ ؟۔ کسی کالج یا یونیورسٹی کے لگتے ہیں ۔ راجو نے بات ختم بھی نہیں کی کہ میں

نے دوسرا سوال کر دیا، رستے میں کون کون سے کالج یا یونیو رسٹی آتے ہیں ۔ میں نے ایک سگنل توڑتے ہوئے پوچھا ۔ جیسے ہی راجو کا جواب آیا میں نے تیزی سے فیصلہ کیا اور ایک شارت کٹ سے کینال بینک روڈ کی طرف گاڑی موڑ دی ۔ کار سے زیادہ تیز میرا دماغ چل رہا تھا ۔ باس وہ کینال روڈ کی طرف مڑسکتے ہیں ۔۔۔۔ میں کینال بنک روڈ پر پہنچ چکا ہوں میں نے راجو کی بات ختم ہونے سے پہلے بتا دیا ۔ صبح صبح کینال روڈ پر بڑا رش ہوتا ہے کئی کالج اسی طرف ہیں خاص کر پنجاب یونیورسٹی اور دفتروں کو جانے والے کچھ اس طرف سے ائیر پورٹ جانے والے ۔ میری نظریں بیک مِرر پر تھی ۔ ایک 125 بڑی خطرناک ڈرائیونگ کرتا گاڑیوں کو بائیں طرف سے اوور ٹیک کررہا تھا۔ میں بھی بائیں قطار میں آگیا ۔ جیسے ہی اس نے مجھے کراس کرنا چاہا ۔ میں نے گاڑی تھوڑی نیچے اتار دی ۔ اسے مجبورا بائیک آہستہ کرنی پڑی ۔ گاڑی اس رش میں بائیک کے سامنے کچھ بھی نہیں تھی ۔ اس لیے میں اسے آگے نہیں نکلنے دیا ۔ باس میں نے آپ کی کار دیکھ لی ۔ راجو کی پرجوش آوازآئی ۔ راجو تم آگے نکل جاؤ ۔ اوکے باس ، راجو مجھے دیکھ کے پرجوش ہوگیا تھا ۔اورکچھ لمحوں میں شُوں کر کے میری دائیں طرف سے گاڑیوں کے درمیان سے خطرناک طریقے سے نکل کے بائیں طرف سے کراسنگ کرنے لگ گیا ۔ بائیں طرف اوور ٹیک خطرناک ہوتا ہے پر کامیاب ہوتا ہے ، میرے اندازے کے مطابق 125 نے بھی راجو کی طرح نکلنا چاہا جب وہ میری کار کے درمیان میں آیا میں نے کار کو ہلکا سا بائیں طرف کیا ۔ وہ پھنس گیا کچھ دیر بعد اسے بائیں قطار میں جانا پڑا ۔ یہی میں چاہتا تھا ۔اس کے آگے پیچھے گاڑیاں تھیں، اس کے انتہائ بائیں طرف فٹ پاتھ تھا اور فٹ پاتھ کے ساتھ نہر تھی ۔ اور ادھر میری گاڑی، وہ بائیں قطار میں پھنس چکے تھے ، نئی بائیک کو اس نے ہوائی جہاز بنایا ہوا تھا۔ اب میں نے لڑکی کی طرف دیکھا ۔ وہ غصے سے میری طرف ہی دیکھ رہی تھی ۔ اف خدایا اس کی گہری نیلی آنکھیں اور ان آنکھوں میں نیلا سمندر اور اس نیلے سمندر کے نیلگوں پانیوں میں دل کرتا تھا ابھی چھلانگ لگا دوں۔ اس نے سفید چادر سے نقاب کیا ہوا تھا ۔ بلکہ پورا جسم پر چادر اس طرح تھی کہ اس کے جسمانی خطوط کا کچھ اندازہ نہیں ہو رہا تھا ۔ میرے اندازے کے مطابق وہ 23 سال کی لگتی تھی ۔ لڑکے نے ہیلمٹ پہنا ہوا تھا ، اس دوران لڑکے نے دو بارکٹ مار کے نکلنا چاہا مگر میں نے اس کی چال ناکام بنا دی ۔ اسے میری بُھونڈی کا اندازہ ہو چکا تھا ۔وہ تو پہلے ہی بڑاغصے میں تھا، اسی کشمکش میں دو تین کالج پیچھے رہ گئے ۔ مجھے ان کی منزل کا اندازہ ہوگیا تو میں نے کار آگے نکالنے میں دیر نہیں لگائی۔ راجو تم باہر ہی رہنا ، کال بند کرنے سے پہلے میں نے اسے ہدایت کی ۔ پھر میں تانیہ کو کال کرنے لگا ۔ بڑے گھر کی بگڑی ہوئی تانیہ اپنا کام بخوبی سمجھتی تھی تانیہ پیڑنہیں گنتی تھی اسے آم کھانے سے مطلب تھا ۔ کچھ ہی دیر میں ، میں تیز رفتاری سے گاڑی پنجاب یونیورسٹی میں لیتا گیا۔ گاڑی پارک کر کے میں کینٹین کی طرف چل پڑ ا۔ 125بائیک والا لڑکا سیدھا جمیعت کے لڑکوں کے پاس گیا وہ انہیں میرے بارے میں ہی بتا رہا ہو گا،۔ مگر جیسے ہی عرفان نے مجھے دیکھا تو جھلاہٹ میں اسے ہی ایک جھانپڑ رسید کر دیا ۔ عرفان پہلے ہی اوپر سے میری وجہ سے جھاڑیں کھا چکا تھا ۔عرفان کی ملتجی آنکھیں مجھے کچھ کہہ رہیں تھیں ،میں نے سر ہلا دیا ۔ میں نے بائیک والے لڑکے کو واپس جاتے ہوئے دیکھا ، لگتا ہے وہ نیلی آنکھوں کو صرف چھوڑنے آیا تھا ، میں اس وقت نیلی آنکھوں مے سحر میں کھویا ہوا تھا اور میرا کسی سے بات کرنے کا بھی موڈ نہیں تھا ۔ اسلیے کینٹین میں جا کے بیٹھ گیا ۔ او شہزادہ ساڈے لاہور دا ۔ ایک خوشامدی آواز نے مجھے خیالوں سے باہر کھنچ لیا ۔ وہ بشیر تھا ۔ میری سرکار بڑے دنوں بعد درشن دیئے ہیں آپ نے۔ اس کی خوشامد جاری تھی ۔ اور بشیر کیسے ہو ۔ مجھے اس سے بات کرنی ہی پڑی ۔ میں ٹھیک جناب ، ایسے کرو دو کولڈ ڈرنک بھیج دو مگرآج پہلے اچھا سا ناشتہ کراؤ ۔ او میرے شہزادے ساری کینٹین ہی تمھاری ہے ، ابھی میں ناشتہ بھیجتا ہوں اپنے شہزادے کیلیے۔ بشیر چلا گیا اور میں پھر خیالوں میں کھو گیا ۔ 4 سال پہلے میرے اندر نیلی آنکھوں کی طلب زیادہ زور مارنے لگی ۔ لیکن صرف نام کے سہارے اسے ڈھونڈنا بھوسے کے ڈھیر میں سوئی ڈھونڈنے کے مترادف تھا۔ میں نے اپنی سی کوشش کی مگر بات نہ بنی ۔ مجھے کوئی ایسا چاہیے تھا جس کا کام ہی آوارہ گردی ہو ، پھر مجھے راجو ملا ۔ آنٹیوں سے اپنے خرچے نکالتا تھا ۔ میں اس سے ملتا رہا اسے پرکھتا رہا ۔ مجھ سے بہت متاثر تھا ۔ ایک دن پوچھنے لگا باس ،کوئی ایسی لڑکی بھی ہو جسے آپ پا نہ سکیں ہوں ۔ ہاں ایک ہے ، کون ہے وہ باس ؟ اس نے حیرانگی سے پوچھا۔ اس کا نام دلآویز ہے ۔ کہاں رہتی ہے وہ ،اس کا تجسس بڑھنے لگا،پتہ نہیں کہاں ہو گی ۔اس نیلی آنکھوں والی کو آخری بار دیکھا تھا تو وہ 13 سال کی تھی اور میں 16 سال کا تھا ۔اب تو وہ 23 سال کی ہوگئی ہوگی ۔اس کا باپ کا نام اور کام ، راجو کے سوال جاری تھے ،سرور خان ، ۔۔۔۔۔۔۔۔ کمپنی میں کام کرتا تھا ۔ کچھ اور اس کے بارے میں جانتے ہیں آپ ، راجو نے پھر سوال کیا ۔ بس یہی کچھ جانتا ہوں ۔ ہاں اس کی ماں کا نام نگینہ تھا ۔ نگینہ کے نام سے ہی میرے منہ کا ذائقہ جیسے کڑوا ہو گیا۔اور کچھ ان کے بارے میں ۔ راجو نے پوچھا ۔ دونوں میاں بیوی پیدائشی لہوری ہیں اور پٹھان خاندان سے ہیں وہ آپ کو کہا ملی تھی ؟۔وہ کرائے کے مکان میں رہتے تھے اس کا پرانا ایڈریس بتا کہ میں راجو کو پر خیال نظروں سے دیکھنے لگا۔ اسی کام کیلیے میں اسے اپنی مصروفیات سے وقت دیتا تھا باس میں لاہور کو اپنے ہاتھ کی لکیروں کی طرح جانتا ہوں ہر گلی سے میں گزرا ہوں ۔ہر گرلز کالج ، ہر یونیورسٹی کا مجھے پتہ ہے ، باس میں اسے ڈھونڈوں گا آپ کیلیے ، راجو مجھے امپریس کرنا چاہتا تھا ۔ اچھا سوچ لو یہ کوئی آسان کام نہیں ہے ۔ایک سال بھی لگ سکتا ہے ،میں نے سے پکا کیا ۔ دو سال بھی لگ جائیں تو پرواہ نھیں ہے ۔اس نے جوش سے کہا ، میں نے اسے ایک پرانی ہنڈا 70 لے دی ۔ جیب خرچ بھی کبھی کبھار دے دیتا ۔ پھر جب مجھے تسلی ہوگئی کہ وہ سنجیدگی سے تلاش کر رہا ہے تو اس کا جیب خرچ مستقل کر دیا ۔ چھ سو چوراسی میل پر پھیلا ہوا لاہور کئی شہروں جیسا ایک شہر تھا ۔اسوقت دوہزاردس میں اس کی آبادی دس کڑوڑ کے لگ بھگ تھی ۔ بلاشبہ راجو کو ایک مشکل مشن دیا تھا لیکن وہ اس کیلیے موزوں ترین تھا ،ڈھونڈتے ڈھونڈتے دوہزار بارہ آگیا ۔ لیکن راجو کا جوش کم نہیں تھا ۔ میں پرنس جو تھا اس کے جوش کو تیز کرنے کیلیے ۔ دوہزار گیارہ میں راجو نے اپنی توجہ ہائیر سیکنڈری سکولوز ، کالجز اور یونیورسٹیز پر مبذول کردی تھی۔ یہ اس کا پسندیدہ کام بھی تھا ۔ اس تلاش سے اب پھر ایک نیلی آنکھوں والی ملی تھی ۔ کافی دیر ہوگئی تھی تانیہ ابھی تک نہیں آئی تھی ۔ میں اس دوران ناشتہ کر چکا تھا ۔ اِدھر دو کولڈ ڈرنک آئی اُدھر تانیہ آگئی ،میں اس کی طرف سوالیہ نظروں سے دیکھنے لگا۔ بتاتی ہوں پہلے کولڈ ڈرنک تو پینے دو ۔ بڑے دنوں بعد تم ہاتھ آئے ہو وہ بھی صبح صبح ، جناب کی صبح تو ایک دو بجے سے پہلے نہیں ہوتی ۔ تانیہ یہی سمجھ رہی تھی کہ میں عام حالات کی طرح کسی کا پیچھا کرتا ہوا آیا تھا ۔ اچھا اچھا بتاتی ہوں میرے چہرے کہ بدلتے تاثرات طرف دیکھ کہ وہ بے ساختہ بولی۔ اس کا نام دلآویز ہے میرے خون کی گردش یکدم تیز ہوگئی ۔ ایم اے انگلش کے فائنل ایئر میں ہے ۔ پٹھان فیملی سے ہے ۔ باپ کا نام سرور خان ہے ۔ یہ اس کا ایڈریس اور فون نمبر ہے ۔ تانیہ نے نوٹس سے پھاڑا ہوا کاغذ کا ٹکڑا میری طرف بڑھایا ۔ ہر وقت نقاب میں رہتی ہے بلکہ چادر کو ایسے لپیٹتی ہے کہ اسکا کچھ پتا نہیں چلتا ۔ کافی نک چڑھی ہےکچھ لڑکے اس کی طرف بڑھے مگر جب سے اس نے ایک لڑکے کو تھپڑ مارےہیں تب سے کوئی لڑکا اس کی طرف نہیں بڑھتا ۔ پتہ نہیں خود کو کیا سمجھتی ہے ۔ بڑی آئی ملکہ حسن کہیں کی ۔ تانیہ نسوانی جلاپے سے بولی تو میں سمجھ گیا کہ دلآویز کا حسن دیکھنے کی چیز ہو گا ۔ اور ایک خاص بات اپنی مما سے اس کی جان جاتی ہے

Share
Article By :

One thought on “پرنس سیریز کی پہلی کہانی – ناگن

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *